Categories

Site Information

 Loading... Please wait...

Blog

نیند نہ آنے کی چار اہم وجوہات اور اُن کے حل

Posted by Saloni Editorial Head (Umair Hassan) on

نیند ہماری زندگی کی اہم ترین چیزوں میں سے ایک ہے۔ مناسب نیند نہ ملنے کی صورت میں نہ بہتر انداز میں کام کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی صحت کے اعتبار سے یہ کوئی درست حکمت عملی ہے۔ تاہم متعدد ریسرچز میں ان کی وجوہات اور حل بھی بتائے گئے ہیں، جن میں سے چند درج ذیل ہیں۔

روشنی

اسٹنٹ پروفیسر نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی آف فیبنزگ اسکول آف میڈیسن کیلی گلیزربرون کے مطابق روشنی سے قدرت کی جانب سے ملنے والی قدرتی گھڑی متاثر ہوتی ہے جو ہمیں بتاتی ہے کہ کب سونا اور کب جاگتے رہنا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ روشنی کس رنگ کی ہے، اس سے بہت اثر پڑتا ہے۔ مطالعات کے مطابق ہمارا جسم نیلم رنگ کے حوالے سے حساس ہوتا ہے اور یہ اس رنگ کی روشنی انرجی سیورز اور کمپیوٹر اسکرینز سمیت دیگر چیزوں سے بھی خارج ہوتا ہے۔

حل: سونے سے ایک گھنٹہ قبل لائٹ بند کر دیں۔ اگر کھڑکیوں کے ذریعے زیادہ روشنی آپ کے کمرے میں داخل ہو رہی ہے تو کالے پردوں کا استعمال کریں یا پھر آنکھوں پر کالا ماسک پہن لیں۔

ٹیکنالوجی

ایک سروے کے مطابق 95 فیصد امریکی سونے سے پہلے کسی نہ کسی ٹیک گیجٹ کا استعمال کرتے ہیں۔ ان گیجٹس سے نیلے رنگ کی روشنی خارج ہوتی ہے جو کہ ہمارے دماغ کو سونے سے روکتی ہے۔ اس کے علاوہ یہ ڈیوائسز ہمارے دماغ کو مصروف رکھتی ہیں جس کی وجہ سے نیند متاثر ہونے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔

حل: برون کے مطابق سونے سے کم از کم ایک گھنٹہ قبل ایک مرتبہ فیس بک چیک کرکے اسے صبح تک دوبارہ چیک نہ کریں۔ اس کے علاوہ آپ فلکس جیسے پروگرامز بھی ڈاؤنلوڈ کر سکتے ہیں جو آپ کے کمپیوٹر اسکرینز کی نیلی روشنی کم کر دیتے ہیں۔

درجہ حرارت

سوتے وقتے ہمارے جسم کا درجہ حرارت کم ہوجاتا ہے۔ اگر آپ کا بیڈ روم گرم ہے تو آپ کا جسم ٹھنڈا نہیں ہو سکے گا اور جتنا زیادہ درجہ حرارت ہوگا آپ کو نیند نہ آنے کے امکانات اتنے ہی روشن ہوں گے۔

حل: برون کے مطابق بیڈ روم کا بہترین درجہ حرارت تقریباً 18 ڈگری سینٹی گریڈ ہے۔ اس کے علاوہ ٹھنڈا کمرہ آپ کے میٹابولزم کے لیے بھی مفید ہے۔

سٹریس

بد قسمتی سے پریشانی سونے کے سائیکلز کو متاثر کر سکتی ہے۔ اس سے سونے میں وقت پیدا ہوتی ہے اور پریشانی کی کیفیت مزید بڑھ جاتی ہے۔ اس کی وجہ سے لوگ آدھی رات کو یا صبح جلدی اٹھنے کی بھی شکایت کرتے ہیں۔

حل: عام طور پر انہیں بچوں کو ہی سنایا جاتا ہے تاہم ایک حالیہ ریسرچ میں بتایا گیا ہے کہ جن لوگوں نے سونے سے 45 منٹ قبل لوریاں سنیں انہیں بہتر نیند آئی۔ برون کہتی ہیں کہ اگر آپ کو نیند نہیں آرہی تو زبردستی سونے کی کوشش سے بہتر بستر سے نکل کر اپنے آپ کو مصروف کر لینا ہے اور اس وقت ہی بستر پر جائیں جب آپ کو نیند آنے لگے۔

Back to Top