Categories

Site Information

 Loading... Please wait...

Blog

دوران حمل ادویہ کا استعمال کتنا ضروری؟

Posted by Saloni Editorial Head (Umair Hassan) on

حاملہ خواتین کو اکثر بچے کی پیدائش تک کسی بھی قسم کی ادویات کا استعمال کرنے سے منع کیا جاتا ہے۔ اگر کسی تکلیف یا درد کے باعث کوئی دوا لینے کی ضرورت بھی پڑ جائے تب بھی اپنے معالج سے مشورے کے بغیرادویات کا استعمال کرنے سے حاملہ خواتین کو روکا ہی جاتا ہے۔ اینٹی بائیوٹیکس، وٹامنز کا ضرورت سے زیادہ استعمال، میکوٹین، انہیلرز اور دیگر قسم کی ادویات ماں کے جسم سے بچے کی خون کی شریانوں میں داخل ہو جاتی ہیں جو کہ بچے کی نشوونما میں خلل پیدا کرسکتی ہیں۔ ماں اور بچے کی صحت کو یقینی بنانے کے لیے ادویات کا استعمال احتیاط سے کرنا ضروری ہے۔

اب سوال یہ ہے کہ کون سی دوائیں استعمال کی جا سکتی ہیں؟

بہتر ادویہ کی نشاندہی

جن ادویات کے استعمال سے عام طور پر حاملہ عورت اور اس کے بچے کو کوئی نقصان نہیں پہنچتا وہ مندرجہ ذیل ہیں:

پیراسٹامول

چند اقسام کے ٹیکے جیسے فلو یو ٹیٹنس وغیرہ، دانتوں کے علاج میں استعمال ہونے والی دوائیں، فلو کےلیے ناک میں ڈالنے والے قطرے یا اسپرے، جلد پر لگانے والی چند کریمیں۔ لیکن بہتر یہ ہے کہ ان ادویات کے استعمال سے پہلے بھی اپنے گائنی کالوجسٹ سے مشورہ کر لیا جائے۔ علاج کے تمام قدرتی طریقے تو محفوظ نہیں ہوتے البتہ ڈاکٹر کے مشورے سے بعض ہلکی نوعیت کی ہومیو پیتھ اور ہربل ادویہ حمل کے دوران کسی تکلیف یا مسئلے کا باعث نہیں بنتیں۔

ہربل یا ہومیو پیتھک ادویہ کا استعمال

کسی ہربل یا ہومیو پیتھک ڈاکٹر سے دوا لینے سے پہلے انہیں یہ ضرور بتا دیں کہ آپ حاملہ ہیں۔ تاکہ وہ یہ بات دھیان میں رکھ کر علاج شروع کریں۔ اگر آپ حمل ٹھہرنے سے پہلے کوئی دوا لے رہی ہیں تو اپنے ڈاکٹر کو اس بارے میں ضرور آگاہ کریں۔

وٹامن بی 6 کا استعمال

حمل کے دوران عورت کو کئی اقسام کی جسمانی اور اعصابی تکالیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ان کے لیے بھی ڈاکٹر چند مخصوص ادویات استعمال کرنے کا مشورہ دیتے ہیں۔ جیسے متلی محسوس ہونے پر وٹامن بی 6 کا کوئی نسخہ لکھ کر دیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ ڈاکٹر مختلف پھلوں کے استعمال کا بھی مشورہ دیتے ہیں جیسے کہ نارنجی، انناس، آڑو یا ناشپاتی کا جوس پینا بھی اس تکلیف میں کسی حد تک راحت کا باعث بنتا ہے۔ کمر کے درد کے لیے مساج یا مالش بھی بتائی جاتی ہے تاہم اس بات کا خیال رکھا جانا ضروری ہے کہ مالش کسی تجربہ کار مساج تھیرپسٹ سے ہی لی جائے۔

مزید ہدایات

حمل کے دوران اپنے معالج سے مسلسل رابطے میں رہیں۔ ادھر اُدھر سے مشورے لینے کی بجائے کسی بھروسہ مند ذرائع سے معلومات حاصل کریں۔ دواؤں سے زیادہ اچھی اور صاف ستھری غذا سے خود کو صحت مند رکھنے کی کوشش کریں۔ پھل، سبزیوں اور دودھ کا استعمال بڑھا دیں۔ تلی ہوئی چیزیں جیسے باہر کے اسنیکس یا کھانے وغیرہ سے پرہیز کریں۔ حرکت میں برکت ہے۔ چہل قدمی اور ہلکی پھلکی ورزش کو اپنا معمول بنائیں۔ خوش رہنے کی کوشش کریں۔ آپ جسمانی اور اعصابی طور پر جتنی تندرست و توانا رہیں گی آپ کا بچہ اتنا ہی صحت مند پیدا ہو گا۔

Back to Top